وزیراعظم سے دوبارہ اعتماد کا ووٹ لینے کا مطالبہ۔ صدر مملکت وزیراعظم کو پارلیمنٹ سے دوبارہ اعتماد کا ووٹ لینے کی ہدایت کریں؛ لیگی رہنما احسن اقبال

وزیراعظم سے دوبارہ اعتماد کا ووٹ لینے کا مطالبہ۔ صدر مملکت وزیراعظم کو پارلیمنٹ سے دوبارہ اعتماد کا ووٹ لینے کی ہدایت کریں؛ لیگی رہنما احسن اقبال

لاہو ر(ویب ڈیسک) پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی جنرل سیکرٹری احسن اقبال نے وزیراعظم نے پارلیمنٹ سے اعتماد کا ووٹ لینے کا مطالبہ کر دیا۔انہوں نے کہا کہ ہفتہ میں قومی اسمبلی کا کورم ٹوٹنا وزیراعظم پر عدم اعتماد ہے۔صدر مملکت وزیراعظم کو پارلیمنٹ سے دوبارہ اعتماد کا ووٹ لینے کی ہدایت کریں۔انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کے اوپر عمران خان کی حکومت ایک عذاب بن چکی ہے۔
احسن اقبال نے مزید کہا کہ سڑکوں کی تعمیر میں کرپشن کے الزام کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ہمت ہے تو ملتان موٹروے پر انکوائری کے لیے چینی صدر کو خط لکھیں۔وزیراعظم سڑکیں بنانے میں کرپشن کی نشاندہی کریں۔حکمران منصوبوں کو متنازعہ کر رہے ہیں۔ن لیگ کے دور میں سی پیک منصوبے کے تحت سڑکیں بنا گئی ہیں۔ حکمران سی پیک کے خلاف دشمنوں کے آلہ کار بنے ہوئے ہیں۔

ہر منصوبے کے تخمینے کی لاگت اور مکمل ہونے میں فرق ہوتا ہے۔قبل ازیں احسن اقبال نے کہاہے کہ آنے والے انتخابات میں عوام کے سامنے تمام سیاسی جماعتیں آزمائی ہوئی ہوں گی ،لوگوں نے پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ (ن) کا دور حکومت بھی دیکھا اور اب پی ٹی آئی کا دور بھی بھگت لیا ہے ،اب کوئی اندھا بھی فیصلہ کر سکتا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کی کارکردگی کے مقابلے میں باقی دونوں جماعتوں قریب قریب بھی نہیں ہیں ۔
ان خیالات کااظہار احسن اقبال نے پارٹی سیکرٹریٹ ماڈل ٹائون کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ احسن اقبال نے کہاکہ آرمی چیف کی ایکسٹینشن کا معاملہ اب کوئی ایشو نہیںہے کیونکہ ایکسٹینشن کی منظوری وزیراعظم دے چکے تھے ،اس کے بعد سپریم کورٹ نے پارلیمان کو قانون بنانے کا کہا تھا،تب سوال یہ تھا کہ کیا پارلیمان آرمی چیف کو برطرف کرے گی یا وزیراعظم کے ایکسٹینشن والے فیصلے کو ریگولرائز کرے گی ،اس وقت سارا نظام یرغمال بنا ہوا تھا اور کسی کے پاس کوئی چوائس نہیں تھی ،اگر اس وقت پارلیمان آرمی چیف کی ایکسٹینشن کی منظوری نہ دیتی تو دنیا میں یہ خبریں لگنی تھیں پارلیمان نے آرمی چیف کو برطرف کر دیا ہے۔

Share

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

close